13 C
Lahore
Friday, February 23, 2024

Book Store

دوستی کے اختلافات

دوستی کے اختلافات

(ہندی کہانی)

جنوب میں مہیلروپیا نامی قصبے میں ایک ویشیا رہتا تھا، جس کا نام وردھمان تھا۔
وردھمان  نے اچھے طریقے سے کاروبار میں کافی پیسہ کمایا تھا، لیکن وہ اس سے مطمئن نہیں تھا۔
ایک بار رات کو لیٹ کر اس نے سوچا کہ اپنی دولت بڑھانے کے لیے کوئی اور طریقہ اختیار کیا جائے، کیونکہ پیسہ ہی وہ واحد چیز ہے جس سے دنیا کی کوئی بھی چیز حاصل کی جاسکتی ہے۔
اس نے پیسے کمانے کے طریقے سوچے۔ دولت چھے ذرائع سے حاصل کی جاتی ہے- خیرات، شاہی خدمت، کھیتی، علم، سود اور کاروبار۔ ان چھے اقدامات میں سے، اس نے محبت کو بہترین پسند کیا۔
یہ سب سوچ کر وردھمان نے اپنے شہر سے باہر جانے کا عزم کیا۔ اس  نے قابل تجارت سامان ایک بیل گاڑی میں لادا اور اپنے اساتذہ کا آشیرواد اور گھر والوں کا پیار حاصل کرنے کے بعد سنجیوک اور نندک نامی دو بیلوں کو گاڑی میں لے کر متھرا کے لیے روانہ ہو گیا۔
اس نے سیکورٹی کے نقطہ نظر سے کئی نوکروں کو بھی ساتھ لیا۔ راستے میں چلتے ہوئے جب وہ جمنا کنارے پہنچے تو سنجیوک نامی بیل کا پاؤں دلدل میں پھنس گیا۔
زور سے آگے بڑھنے کی کوشش کی تو بیل کی ٹانگ ٹوٹ گئی۔

ویشیا بیل کی ٹانگ کے ٹھیک ہونے کا انتظار کرتے رہے۔ جب وہ تین دن اور تین راتیں وہاں پڑا رہا تو اس کے نوکروں نے سمجھایا کہ اس ناہموار جنگل میں ایک بیل کے لیے لیٹنا درست نہیں جو پرتشدد شیر اور شیر جیسی خوفناک مخلوق سے بھرا ہوا ہو۔
کیونکہ یہ بھی کہا گیا ہے کہ چھوٹی چیز کے بدلے بڑی چیز کو کھونا نہیں چاہیے۔ ویشیہ اس مشورے کو قبول کرنے پر مجبور تھا۔
اس نے دو نوکروں کو بیل کی دیکھ بھال کے لیے وہاں چھوڑ دیا اور باقی نوکروں کے ساتھ ایک بیل کی مدد سے آگے بڑھ گئے۔
انھوں  نے دو دن یہاں اور وہاں گزارے اور پھر ویشیا کے پاس گئے اور جھوٹ بولا کہ اگلے ہی دن بیل مر گیا تھا اور انہوں نے اس کی رسم ادا کر دی تھی۔
بیل کی موت کی خبر سن کر ویشیا کو بہت دکھ ہوا۔
لیکن قانون کی حکمرانی کے سامنے وہ کیا کر سکتا تھا۔
اطمینان دل میں لیے اس نے اپنا سفر جاری رکھا۔
دوسری طرف جب سنجیوک کو بھوک اور پیاس محسوس ہوئی تو وہ کوشش کرتے ہوئے اٹھے، پھر آہستہ آہستہ چلتے ہوئے جمنا کے کنارے پہنچے۔
اس ساحل پر گھاس چرنے والے جانور نہ ہونے کی وجہ سے وہاں ہری گھاس بہت تھی۔ اس ہری گھاس کو کھا کر اور جمنا کا نرم پانی پینے سے سنجیوک چند دنوں میں صحت مند ہو گیا۔
اس طرح آدھا وہار کرتے ہوئے وہ شیو کے نندی بیل کی طرح مضبوط ہو گیا۔
ایک دن جب سنجیوک جمنا کے کنارے ہری گھاس پر چرتے ہوئے بے رحمی سے مار پیٹ کر رہا تھا، اسی وقت پنگلک نام کا شیر پانی پینے کے لیے وہاں آیا۔
جب اس نے دور سے سنجیوک کے رونے کی آواز سنی تو وہ ڈر گیا اور جھاڑیوں میں چھپ گیا۔ اشارہ کر کے اس نے ساتھ آنے والے اپنے نوکروں، ریچھوں، شیروں وغیرہ کے ساتھ حکمت عملی بنائی تاکہ کوئی اس تک نہ پہنچ سکے۔
پنگلک کے ساتھ دو گیدڑ بھی تھے۔ ان کے نام کارتک اور دامنک تھے۔
یہ دونوں گیدڑ کسی زمانے میں پنگلک کے وزیر تھے لیکن ان کی شرارتوں کی وجہ سے انہیں معزول ہونا پڑا۔
تب سے یہ دونوں اپنے مالک کو راضی کرکے کھویا ہوا مقام حاصل کرنے کی کوشش کرتے تھے۔ وہ اکثر شیر کا پیچھا کرتا تھا اور شیر کے چھوڑے ہوئے شکار کو کھا کر اپنی خوشی مناتا تھا۔
اس وقت وہ پانی پینے کی بجائے اپنے مالک کو خوف سے جھاڑیوں میں چھپے دیکھ کر بہت حیران ہوا۔ دامنک نامی گیدڑ  نے اپنے ساتھی سے کہا –
کرتک بھائی۔
ہمارے بادشاہ پیاسے ہونے کے باوجود یمنا کے کنارے نہیں گئے اور یہاں جھاڑیوں میں چھپ کر بیٹھ گئے، اس کی کیا وجہ ہو سکتی ہے؟
کارتک نے جواب دیا –
دمنک بھائی! ہم اس کے ساتھ کیا کریں؟
بغیر کسی مقصد کے تجسس سے کچھ نہیں کرنا چاہیے۔ ایسا کرنے والا اس طرح ہلاک ہو جاتا ہے جس طرح کیل چننے والا بندر ہلاک ہو جاتا ہے۔

۞۞۞۞۞۞۞

Previous article
Next article

Related Articles

Stay Connected

2,000FansLike
2,000FollowersFollow
2,000SubscribersSubscribe
گوشۂ خاصspot_img

Latest Articles

Ads Blocker Image Powered by Code Help Pro

Ads Blocker Detected!!!

We have detected that you are using extensions to block ads. Please support us by disabling these ads blocker.

Powered By
100% Free SEO Tools - Tool Kits PRO