23 C
Lahore
Saturday, September 23, 2023

Book Store

zindagi k jitne darwaze|زندگی کے جتنے دروازے

احمد ندیم قاسمیؔ

زندگی کے جتنے دروازے ہیں مجھ پہ بند ہیں
 حد نظر سے آگے بڑھ کر دیکھنا بھی جرم ہے

zindagi k jitne darwaze hain mujh per band hain
dekhna, had e nazar se aagey badh kar dekhna bhi jurm hai

سوچنا اپنے عقیدوں اور یقینوں سے نکل کر سوچنا بھی جرم ہے
آسماں در آسماں اسرار کی پرتیں ہٹا کر جھانکنا بھی جرم ہے

sochna, apne aqeedon awr yaqenon se nikal kar sochna bhi jurm hai
aasma’n dar aasma’n israar ki parten hata ker jhankna bhi jurm hai

کیوں بھی کہنا جرم ہے کیسے بھی کہنا جرم ہے
سانس لینے کی تو آزادی میسر ہے مگر

kyun bhi kehna jurm hai, kese bhi kehna jurm hai
sans lene ki azadi to mayasar hai magar

زندہ رہنے کے لیے انسان کو کچھ اور بھی درکار ہے
اور اس کچھ اور بھی کا تذکرہ بھی جرم ہے

zinda rehne k liye insan kw kuch or bhi darkar hai
or, as kuch or ka tazkara bhi jurm hai

اے خداوندان ایوان عقائد
اے ہنر مندان آئین و سیاست

eh khudawandan e aiwan e aqayed
eh humar mndan e ayeen o sayasat

زندگی کے نام پر بس اک عنایت چاہیے
مجھ کو ان سارے جرائم کی اجازت چاہیے

zindagi k naam per bas ik inayat chahye
mujh ko in sare jurayem ki ijazat chaye

 

Related Articles

Stay Connected

2,000FansLike
2,000FollowersFollow
2,000SubscribersSubscribe
گوشۂ خاصspot_img

Latest Articles

Ads Blocker Image Powered by Code Help Pro

Ads Blocker Detected!!!

We have detected that you are using extensions to block ads. Please support us by disabling these ads blocker.