17 C
Lahore
Monday, March 4, 2024

Book Store

تانگے والا

تانگے والا

دیویندر ستیارتھی

 

شاہ محمد کے تکیے کا ایک حصہ کاٹ کر اصطبل بنایا گیا۔ یہ سب زبردستی ہوا۔ آخر رمضان کا سینہ بھی چوڑا ہو گیا اور اس خدا ترس نوجوان کو دیکھ کر سب جوش و خروش سے جواب دیتے تھے۔ پھر جبار کا یہ قصہ اور بھی شدت اختیار کر گیا۔ لیڈز کبوتر کے اڈے سے قبر تک بکھرے ہوئے تھے۔ رمضان کے گھوڑے کو بکھیر کر مصلی اٹھاؤ۔ جس کی ناک سے بدبو آتی وہ سیسہ اٹھا لیتا۔ رمضان کو گھوڑے کی فکر تھی۔ البتہ وہ گھوڑے کی جگہ کو آئینے کی طرح چمکاتا رہتا تھا۔
شاید کمیٹی میں کسی کی بات نہیں سنی گئی۔ رمضان اپنے تانگے پر انسپکٹر کو مفت میں دریا کا دورہ کرنے کے لیے لایا کرتا تھا۔ انسپکٹر کہتا، ہمارے راج میں رمضان کی چھٹی ہے۔ رمضان کو سمجھنا، انسپکٹر کا راز غیر متزلزل ہے۔ اس کی آنکھوں میں اصطبل پلٹا۔ تصور میں گھوڑے کا مقام اور بھی روشن ہو جاتا۔ محبت کے نئے انداز سے اس نے گھوڑے کی طرف دیکھا اور سوچا کہ شاید انسپکٹر کو یہ حرکت پسند نہ آئے۔ ورنہ وہ ٹھیلے سے نیچے اتر کر گھوڑے کی آنکھوں میں جھانک کر اس کے سینے پر سر رکھ دیتا۔
گھوڑے کا نام عدو تھا۔ اس آدمی کو پگھلے ہوئے بچے کی طرح مرتے ہوئے دیکھ کر رمضان کو یقین تھا کہ جب وہ بڑا ہو گا تو یہ ابلاق بچہ ایک خوبصورت اور ہوشیار گھوڑا بنے گا اور جب اس نے اسے عید کے دن خریدا تھا تو دانت صاف کر رہا تھا۔
ایک طویل عرصے سے .. آخر کار وہ چار ٹانگوں والا کوچ تھا اور گھوڑوں کے بارے میں اس کا علم گویا مسلمان تھا۔ عدو کو نہاتے ہوئے رمضان کے ہاتھ اس کے کالے مخمل کے ماتھے پر پھسلتے رہے۔ وہ اس کے سفید ہاتھ پاؤں  دھوتا اور پھر اس کا منہ کھول کر دیکھتا دودھ کے کتنے دانت رہ گئے ہیں؟

اور عدو رمضان کے سینے پر اپنا منہ تھپتھپانے لگتا۔ جیسے کہ، “اب سے مجھے تانگا میں ہل چلانے کا سوچنا بھی نہیں! رمضان میاں۔ ابھی میرے کھیلنے کے دن ہیں۔ مجھے پانچ سال کی عمر سے پہلے میرے ٹھیلے میں ہل مت چلاؤ۔ پھر دیکھنا کہ میرے پھیپھڑے کتنے مضبوط ہوتے ہیں اور میں کتنا دوڑتا ہوں۔
رمضان کہتا اب تم بھی آرام سے نہا لو گے یا مفت میں شرارت کرو گے عدو بیٹا۔ لیکن عدو نہیں مانتا اور۔۔۔رمضان اپنی مشکل سے دلہن کو پکارتا اور کہتا،
اری، یہاں آ کر دیکھو، اسے تھوڑا سمجھاؤ۔ لیکن تم  نے اسے اس کے سر پر رکھا ہے، اس کی پیٹھ پر ہاتھ پھیر دیا ہے۔
مشکی دلہن قریب آتا اور کہتا، تم چلے جاؤ میں خود نہا لوں گا۔ تمہارا بیٹا تمہیں اس غریب آدمی کی شکایت کرنے میں مزہ آتا ہے۔ اور رمضان کہتا کہ اپنے بیٹے کا خیال رکھنا۔
اس کے مقابلے میں عدو اپنی محبت کا اظہار اناڑی طریقوں سے کرتا تھا۔ وہ عجیب انداز میں پچاڑی کو اچھالتا اور رمضان کو دیکھ کر ہنسنے لگتا۔  رمضان کہتا
ذرا ٹھہرو بیٹا! ابھی آیا. آپ کے لیے بہت اچھے مصالحے منگوائے گئے ہیں۔ اگر آپ اسے کھائیں گے تو آپ خوش ہوں گے۔

لیکن عدو کو قبول کرنا اتنا آسان نہیں تھا۔ مسلسل ہنہنائے جاتا۔ جیسے کہہ رہا ہو، دور مت جانا، رمضان میاں۔ مسالے اب بھی آ سکتے ہیں۔ میں بس تمہیں دیکھتا رہوں، تمہاری باتیں سنتا رہوں۔
رمضان کہے گا کہ بیٹا! بے صبری نہ کر۔ میں تھوڑی دیر میں واپس آؤں گا۔ عدو ہنہنانا روک دیتا۔ لیکن ذرا سی بے تکلفی ہو جاتی اور پھر معلوم ہوتا کہ وہ  صرف اتنا کہہ رہا  کہ ’’اچھا باہر دیر نہ کرنا‘‘۔ اور عدو کی خوبصورت تھوتھنی زمین کی طرف جھک جاتی۔
گزشتہ برسوں سے رمضان رونڈوے کے جیسی زندگی گزار رہا تھا۔ بےچاری بیوی بکرے کے ڈوپٹا کو بھی ترس رہی تھی۔ زمانے کی گرمی اور سردی نے رمضان کو بہت پریشان کر رکھا تھا۔ سائی جی کا قرض الگ ہی بڑھ گیا تھا۔ وہ بکرے کا ڈوپٹا اپنی مشکی دلہن کے پاس کہاں سے لے جائے گا؟

اب وہ عدو سے ہی چھین لیتا تھا۔ اگر اس سمجھدار، ہمدرد عدو کے بجائے، اس کے پاس وہی پہلا گھوڑا ہوتا، تو اس کی زندگی ایک پرسکون، گرم دوپہر ہوتی۔
اصطبل میں بیٹھے رمضان کی آنکھیں اکثر ایسے جاتیں جیسے وہ کوئی خواب دیکھ رہا ہو۔ اس وقت اسے محسوس ہو گا کہ عدو کی آنکھیں بھی ملی ہوئی ہیں اور وہ دونوں کچھ دیر پہلے مشکی دلہن کو دیکھ رہے ہیں۔ عدو کے گلے میں بازو ڈال کر پوچھتا، “سچ بتاؤ عدو بیٹا، تمہیں مشکی دلہن یاد ہو گا، جو تمہیں ہر صبح نہاری کھلایا کرتا تھا؟
سات سال کے طویل عرصے میں مشکی دلہن کے ہاں کوئی اولاد نہ ہوئی۔ وہ بانجھ تھی اور زمین کے نیچے قبر میں سوتی تھی۔ رمضان کی بعض راتوں میں وہ محسوس کرتا کہ بچے کی غیر مردہ انگلیاں اس کی گردن پر رینگ رہی ہیں، جیسے قبر میں دلہن کا رحم سبز ہو گیا ہو اور اللہ کے فضل سے اس کا بچہ اپنے باپ کے اصطبل کو پہنچ گیا ہو۔ اور وہ سمجھتا ہے کہ یہ سب عید ہے۔

یہ دعاؤں کا نتیجہ ہے۔ آگے جا کر اس کے خواب میں مزید دلچسپ نظارہ ہوتا۔ وہ دیکھتا ہے کہ اس کا بچہ اکیلا نہیں ہے۔ شہر بھر کے بچے اسے مارتے ہوئے مسکرا رہے ہیں اور اسے گھور رہے ہیں، اور عدو ہنس رہا ہے، جیسے کہہ رہا ہو، رمضان میاں کا نظارہ دیکھو اور بتاؤ ان میں سے سب سے خوبصورت بچہ کون سا ہے؟
ان تمام خوابوں  نے اس کے سوئے ہوئے سمندر کی لہروں کو جگا دیا۔ لوگ سمجھتے تھے کہ رمضان پہلوان ہے کوئی جھوٹ نہیں بولتا۔ لیکن یہ بھی سچ تھا کہ بیوی کی موت کے بعد اس کی روح  نے کپکپاہٹ کی صورت اختیار کر لی تھی جس طرح یہ پرندہ جنگل میں بیٹھ کر کانپتا رہتا ہے۔ اس کی روح بھی مشکی دلہن کی یاد میں لرزتی تھی۔
آٹھ سیر گندم کا آٹا ہے، عدو کا بیٹا۔

رمضان اپنے ہنگاموں کی کہانی شروع کر دیتا، گویا حیواں کا بیٹا انسان کے دکھ کو ٹھیک سے سمجھنے کا مشورہ دے رہا تھا۔ ایک دن ساڑھے پانچ سیر آٹے کا ہو گیا۔
بیٹا! حکومت کے لیے افسوس کی بات یہ تھی کہ آٹھ سیر روپے کی قیمت مقرر کی گئی۔ اور عدو  نے اپنا خوبصورت منہ اٹھا کر رمضان کی طرف دیکھا، جیسے تم کہہ رہے ہو
گھبراؤ نہیں، رمضان میاں، آٹا پھر پہلی قیمت پر پندرہ سیر کا آئے گا۔  لیکن رمضان سر جھکا کر بیٹھ جاتا۔ اسے لگا جیسے مکڑی اس کے دماغ میں جالا بنا رہی ہے۔ ایڈو ہچکی، جیسے کہہ رہا ہو
واہ! رمضان میاں تم بھی بڑے پہلوان ہو۔
ارے میاں حوصلہ رکھو یہ مصیبتیں ہمیشہ نہیں رہتیں۔ رمضان کا سر چڑھ جاتا۔ عدو اپنی پیٹھ پھینک کر رمضان کی طرف دیکھنے لگا۔ جیسے کہنے لگے، “میں رمضان میں بھی نہاری نہیں پا سکا، لیکن مجھے پروا نہیں۔ میں تمہارے لیے سو میل دوڑوں گا، خون اور پسینہ ایک ہو جائے گا۔ اور عدو بہت دوڑیں گے اور پسینہ اور خون ایک ساتھ بہائیں گے۔ لیکن رمضان کی آمدنی، جسے وہ فضائی خطرہ سمجھتا تھا، ان دنوں بہت کم ہو گیا تھا۔

تانگے کا آلہ بہت پرانا تھا۔ ربڑ کے نئے ٹائروں کی اب کوئی امید نہیں تھی۔ اس کی قیمت بہت بڑھ گئی تھی۔ زمانہ بدل گیا تھا، رات کو موسم بدلتا تھا اور سائیں جی کی قسطوں کی فکر اس کے دماغ کو چھیدتی تھی۔
عدو کے گلابی چہرے کو دیکھ کر رمضان اپنے آپ کو مجرم سمجھنے لگا۔ جہاں وہ اسے روزانہ ڈیڑھ من سبز چارہ اور چار سرونگ اناج کھلاتا تھا۔ لیکن اب ان کی قیمتیں بہت بڑھ چکی تھیں۔ پندرہ آنہ سبز چارہ اور آٹھ آنہ اور رمضان ہوتا تھا۔
پوری خوراک تو دور کی بات، آدھی خوراک بھی نہیں دی جا سکتی تھی۔ اسے اپنے آپ سے نفرت ہونے لگی اور اب اسے محسوس ہو گا کہ عدو کا آخری قطرہ اس کے دماغ میں داخل ہو رہا ہے اور اس کے پیشاب کا سیلاب اس کے دماغ پر ضرور گرے گا۔ جاہل آدمی کام ایک بھوکا گھوڑا کرتا ہے جسے وہ اپنے غلام کو اپنا خریدار سمجھتا ہے۔
اگر بھوک ستا رہی ہوتی تو رمضان کو اپنے پیٹ میں آگ کا لاوا اٹھتا محسوس ہوتا اور وہ سوچتا کہ یہ لاوا عدو کے پیٹ میں بھی بھڑک اٹھے گا، وہ ٹونگا روک لیتا، لیکن یہ ایک چھوٹا سا علاج تھا اور یہ تھا۔ لوگوں کا خدا کا عجوبہ۔اس کی طرف دیکھتے ہوئے بھی وہ محسوس کرتا کہ یہ لوگ اسے گھور رہے ہیں اور کہہ رہے ہیں

کمبخت! وہ تو خود مر جائے گا، وہ غریب گھوڑے کو بھی بھوک سے کیوں مارتا ہے؟ تم اسے بیچ کیوں نہیں دیتے؟”
لیکن رمضان نے عیدو بیچنے کے خیال کو یکسر مسترد کر دیا۔ وہ بہت اداس تھا۔ اگر غسل ہو تو کئی دن تک منہ بھی نہ دھوئے۔ نفرت کہ اسے محسوس ہونے لگا کہ اس کے گندے جسم کی نچلی تہوں میں بھی دنیا کی غلاظت بھر جاتی ہے۔ اس کی خاکی قمیض اور سر کا لباس مٹی سے رنگا ہوا تھا، شاید اس کی روح بھی۔
بھوک اور غصے میں کھوئے ہوئے رمضان نے محسوس کیا کہ جنگ کی خبروں نے ایک مکناتیسی قوّت رکھی ہے، جس کے سامنے اس کی رگڑیاں لوہے کے چن کے دیگوں کی طرح کھڑی ہیں “تمہیں معلوم ہے کہ جرمن آدمی ایدو کیا کہتا ہے؟” اس نے پوچھا. عدو خاموش رہا اور رمضان نے کہا۔
“جرمن والا کہتا ہے کہ روسی شخص کو اپنا سکہ قبول کرنا چاہیے۔” تھوڑی دیر بعد عدو نے سر ہلایا اور رمضان کی آنکھوں میں جھومنے لگا۔ گویا کہہ رہے ہیں کہ رمضان میاں یہ کوئی نئی خبر نہیں، شہر کے چوتھے دروازے کے باہر ریڈیو کی روشنی سے جنگ کی گرما گرم خبریں بھی سن رہا ہوں۔
جنگ کے تباہ شدہ متاثرین کی خبر سن کر رمضان اپنے مصائب کو غیر حقیقی اور مصروف نظر آنے لگا۔ اصطبل میں بیٹھ کر ہکا پیتے ہوئے اس نے سوچا کہ جرمنی ایک بڑا ٹن ہے جس پر ہٹلر روس سے گزرنا چاہتا ہے۔ لیکن ایک دن جب اسے سواری کے لفظ سے معلوم ہوا کہ روسی کسان مزدور دو ہزار میل لمبا ہے۔

وہ دیوار بنا کر ہٹلر کا راستہ روکے کھڑا ہے اور ہٹلر پوری طاقت سے بھی اس انسانی دیوار کو توڑ کر آگے نہیں بڑھ سکتا، اس لیے وہ بہت خوش ہوا اور اصطبل میں پہنچ کر چلایا! ’’روس کی سڑکوں پر ہٹلر کے ٹونگو کے نئے ربڑ کے ٹائر بھی کام نہیں کریں گے‘‘ اور ایدو ہچکیاں لے کر گویا کہہ رہا ہے ’’آپ کی کوئی خبر میرے لیے نئی نہیں ہو سکتی رمضان میاں!‘‘
رمضان نے سوچا کہ اگر ہٹلر کو شکست ہوئی تو یہ جنگ ختم ہو جائے گی۔ اس نے یہ رائے سواروں کی گفتگو سن کر بنائی تھی۔ جنگ نے ہر چیز کی قیمت بڑھا دی تھی۔ لاکھوں میل دور لڑی جانے والی جنگ کے خوفناک پنجے پہلے ہی غریبوں کے منہ سے روٹی چھین رہے تھے۔

اسے عدو کی دھندلی آنکھیں غم اور خوف کو گلے لگا رہی تھیں، جیسے وہ جنگ میں مرنے والوں کی چیخیں سن رہا ہو… لہجے میں ایک لہجہ ابھر رہا ہے، جیسے کوئی عجیب سا لیکن سایہ دار خوف اس کی روح کو اپنی مٹھی سے جکڑ رہا ہے۔ میں دبا رہا ہوں۔
خرپشت کے کانٹوں کی طرح لٹکتے سر کے لمبے بالوں میں شاید رمضان نے کبھی کنگھی نہیں کی تھی۔ اس کے سینے کی پیمائش بھی اب تک کم ہو چکی تھی۔ لیکن مصلّی اس حسبِ مؤمل کو انچ انچ پورے چالیس انچ دیکھتے تھے۔

رمضان اب اسے کبھی کبھار برستا ہے۔ اور کبوتر کے اڈے کے قریب سے آگے بڑھتے ہوئے مصلی کا راقس کا انداز نظر آتا اور مصلی عدو کی پیٹھ پر ہاتھ پھیرتا تو وہ اپنی تھوتھنی اس کی طرف پھیرتا اور یوں کھرکھتا، جیسے کہہ رہا ہو، “میں تمہیں جانتا ہوں، مصلی۔ ”
ایک دن رمضان رات گیارہ بجے اصطبل میں واپس آیا۔ مصلی نے بتایا کہ وہ عدو کے لیے ہری گھاس کا ایک بنڈل حاصل کرنے کی کوشش کرتا رہا، لیکن کوئی بھی غشیار قرض لینے پر راضی نہیں ہوا۔ ادو نے اپنے مالک کے داہنے بازو کو ایک دو بار تھپکی دی، جیسے کہہ رہا ہو،

کچھ غلط نہیں، رمضان میاں! میں بغیر کچھ کھائے رات گزاروں گا۔” رمضان کو پسینہ آ رہا تھا۔ اس نے تکیے کے پاس ایک دکان کے سامنے ٹونگا روکا اور تین تنوری روٹیاں خریدیں۔
ٹانگے پر بیٹھ کر ٹیکس نگل گیا۔ لیکن ایدو جو سلیم کی سواری کو بھوکے پیٹ پر نئی آبادی لے کر گیا تھا اور وہاں سے بھوکا ہی واپس آیا تھا، اب وہ رات بھر بھوکا رہے گا۔ رات بہت بیت چکی تھی۔ اس وقت اناج بھی نہ مل سکا۔ رمضان سوچنے لگا کہ آدھی رات کے بعد فرشتہ آئے گا اور پوچھے گا کہ تم زمین پر چلنے والے اپنے مالک سے کیا شکایت ہے؟
اور عدو کہے گا، “آسمان والے، ہم شکایت کیوں کریں گے؟” فرشتہ عدو کے قریب آئے گا اور کہے گا، ’’اب میں تمہارے آقا کے لیے دعا کرتا ہوں۔ ‘تم بھی دعا’ میں میرے ساتھ شامل ہوں۔
اور Idu ‘میرے لیے دعا’ میں شامل ہوگا۔ کیونکہ خدا کے دربار میں صرف فرشتے کی دعا قبول نہیں ہوتی۔ ہر رات ایک فرشتہ آتا ہے اور گھوڑے سے یہی سوال کرتا ہے۔

کوئی گھوڑا مالک کی معمولی بدتمیزی کی شکایت نہیں کرتا۔ لیکن عدو ایسا شریف گھوڑا ہے کہ بھوکے پیٹ چودہ میل سفر کر کے بھی کھانے کو کچھ نہ ملا اور فرشتے کے سامنے میرے خلاف ایک لفظ تک نہ لائے۔ حالانکہ وہ کہہ سکتا ہے کہ وہ بھوکا کھڑا ہے اور اس کے مالک نے اسے دیکھتے ہی تین تنوری روٹیاں خالی کر دیں۔
رمضان سو نہ سکا۔ دن بھر کے مشاہیر اور تجربات مختلف شکلوں میں اس کے سامنے آنے لگے۔ اندھیرے میں عدو کا چہرہ صاف نظر نہیں آ رہا تھا، وہ پلنگ سے اٹھ کر اس کے قریب چلا گیا۔ وہ ساکت کھڑا تھا۔ اس کے منہ پر ہاتھ رکھ کر اس نے کہا،
اب سو جاؤ عدو بیٹا! جب کوئی فرشتہ آئے تو یہ مت کہو کہ تم بھوکے ہو۔
عدو نے اپنی تھوتھنی نہیں ہلائی اور نہ ہی وہ ہنسی۔ یہ سوچ کر کہ عدو سو رہا ہے، رمضان پھر سے چارپائی پر بیٹھ گیا۔ دس انا سے شروع ہونے والا اور سلیم ٹونگا لے کر بڑی مشکل سے بارہ آنوں میں نئی ​​آبادی میں جانے والا خوش بخت نوجوان رمضان کی آنکھوں میں بھٹکنے لگا۔

وہ بہت جلد اس سے متاثر ہو گیا تھا۔ رمضان نے اسے بتایا تھا کہ وہ رنڈو ہے۔ پھر اس نے مشکی دلہن کے لیے دوپٹہ نہ ملنے، عید کے دن اسے خریدنے اور انسپکٹر کی جبری مشقت کاٹنے کا سارا حال سنایا تو خوش مزاج نوجوان نے ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے کہا۔
کاش تم روس میں پیدا ہوتے، کوچ مین۔” وہ یہ سن کر بہت خوش ہوا کہ روس میں تمام چمٹے سوویت حکومت کے ہیں، گاڑیاں، ریل گاڑیاں اور موٹریں بھی کیوں؟ نوجوان نے سر ہلایا اور کہا، ’’روس میں سب کچھ لوگوں کے لیے ہے۔ وہ مل کر اپنے حصے کا کام کرتے ہیں، چاہے کھیت میں ہو یا فیکٹری میں۔

سب کو بھوک لگتی ہے، کوئی بھوکا نہیں رہتا۔ تمام سوویت کے ہوٹلوں سے کھانا دستیاب ہے۔ اور رمضان نے سوچا، روس میں واقعی مزہ آیا ہوگا۔ پھر اس کی پلکیں گرنے لگیں، دماغ کی روشنیاں ٹمٹمانے لگیں۔ وہ نیند کے دھارے میں بہہ گیا، بہتا چلا گیا…
اس نے دیکھا کہ آسمان سے روٹی کی بارش ہو رہی ہے۔ وہ بہت خوش تھا۔ صدیاں گزر گئیں کہ حضرت موسیٰ علیہ السلام کی قوم کے لیے من و سلویٰ آسمان سے نازل ہوتا تھا۔ اب یہ روٹیاں بھنی جا رہی ہیں۔ یہ نئے زمانے کا ذہن و سالوا ہے۔ تمام غریبوں کے لیے خیرات اللہ کی طرف سے ہے، اب کوئی بھوکا نہیں سوئے گا۔ وہ روٹیوں کی طرف لپکا۔ معلوم ہوا کہ یہ روٹیاں نہیں ہیں بلکہ گول اور گول، چوڑی چوڑی پیٹیاں روٹیاں ہیں! توبہ، توبہ، اللہ میاں نے بھی اہلِ وطن سے مذاق شروع کر دیا ہے۔
اس کی آنکھ کھل گئی۔ ان روٹی نما راستوں پر اللہ کا کرم ہے۔ وہ فوراً اٹھ کر بیٹھ گیا۔ عدو اپنا چہرہ چوڑا کر رہا تھا۔ جیسے کہنے لگے، “میں رات بھر سو نہیں سکا، رمضان میاں، اگر تم بھی رتجگا کرتے تو عجب تماشا دیکھتے۔ مجھے حیرت ہوئی. آسمان سے روٹیوں کی بارش ہونے لگی۔

ادھر ادھر روٹیاں ہی نظر آتی تھیں۔ لیکن اس کے بعد آپ بیدار ہو جائیں گے اور مجھے کھولنے پر راضی ہو جائیں گے، یہ جانتے ہوئے کہ روٹیاں کہاں گم ہو گئی ہیں۔ رمضان نے سوچا کہ شاید انسانوں کی طرح شیطانوں کو بھی خواب آتے ہیں۔
جب مصلی کچھ ہری گھاس اور دانے لے کر آیا تو عدو ہنسنے لگا۔ سورج کی کرنیں چھان کر اس کے سیاہ مخملی مجسمے پر پڑ رہی تھیں۔ مصلی قریب آیا اور اناج کی بوتل عدو کے خول میں رکھ دی۔  پھر سے ہچکی، گویا کہہ رہا ہے، “جب بھی خمیری ڈمپلنگ یہ کہہ کر آپ کا مذاق اڑاتے ہیں، میں اسے کاٹنا چاہتا ہوں، مصلی اور اس شخص کو، چاہے وہ رمضان ہی کیوں نہ ہو…

چھ فٹ اونچا خدا ہیکل رمضان چوتھائی گز کے سینے کے ساتھ، مصلی نے کہا، “عدو پر زندہ رہو! اللہ کے رسول کی برکتیں” رمضان نے جیب میں ہاتھ ڈال کر مصلی کو اپنے پاس بلایا۔ رمضان بہت خوش نظر آرہا تھا۔
ایک دن، دو دن، پانچ دن بڑی مشکل سے رمضان نے آٹھ روپے بارہ آنہ کا اضافہ کیا تھا کہ دس روپے کی قسط ادا کرنے کا وقت آگیا۔

سائیں جی آئے اور ادھر ادھر کی گفتگو کی منزلیں طے کرنے کے بعد اصلی لہجہ دس روپے پر ٹوٹ گیا۔ سب سے پہلے وہ رمضان کی جی میں آیا، سائی جی کو بتانے کے لیے کہ ان کے پاس صرف پانچ روپے ہیں جو وہ خوشی خوشی دے سکتے ہیں۔
باقی پانچ روپے چند دن رہ کر ادا کر دیں گے۔ اور اگر کوشش کرنے کے بعد بھی حت الوصع ادا نہ کر سکے تو اگلی قسط دس کی بجائے پندرہ ہو گی۔ لیکن بعد میں اس نے ایسی بات شروع کی تو سائیں جی نے کہا کہ رمضان میاں تمہاری قسطوں سے کوئی جھگڑا نہیں ہے لیکن تم بہت بوڑھے ہو گئے ہو۔ اگر ہر قسط وقت پر ادا کر دی جائے تو زیادہ آسانی سے ادا کرنے والا باقی رہ جاتا ہے۔
رمضان نے عدو کی طرف دیکھا، جیسے اس کی رائے پوچھ رہا ہو۔ بے آواز عدو کی آنکھوں میں رمضان نے اس کے جذبات پڑھنے کا علم سیکھ لیا تھا۔ ان کی سفارش یہ تھی کہ جیب میں موجود تمام نقدی، پیسے اور رقم سائی جی کے سامنے جمع کر دی جائے اور رمضان نے بھی ایسا ہی کیا۔
سائیں جی نے رقم گنی۔ اس کے چہرے پر ایک وحشیانہ ہنسی پھیل گئی۔ ’’معاملہ کیسے بنے گا رمضان میاں، دس روپے چاہیے اور ڈیڑھ روپے کی کمی ہے۔‘
رمضان کا دماغ سوچنے سے رک گیا تھا۔ وہ چونک گیا۔ “روپے کا شارٹ فال ہے۔ پیسے اور پیسے کے ڈھیر لگ گئے، سائیں جی۔ اب کیا کہتے ہو؟” “کہ روپے کی کمی ہے۔
رمضان کو یوں لگا جیسے کوئی اس کے سر میں داخل ہو کر اس کے سب سے اہم بالوں کے چشمے کو کھینچ رہا ہو، جیسے اس کے دل میں سوراخ کیا جا رہا ہو تاکہ اس کا سارا خون نکال لیا جائے۔ اس نے عدو کی طرف دیکھا۔ اس کی سفارش یہ لگتی تھی کہ کل شام کا وعدہ کیا جائے اور اس نے وہی وعدہ کیا۔
سائیں جی کے چہرے پر زندگی کی لہر دوڑ گئی اور وہ کبوتر کے اڈے کے پاس پڑے کوڑے کو دیکھتے ہوئے باہر نکل گئے۔ عدو ہنس رہا تھا۔ اس کی چھینک میں اس کی تمام خودداری کی چمک تھی۔ وہ رمضان کی تنگی سے واقف تھا۔ لیکن شاید وہ ہمیشہ ایک مخلص کوچ مین کے ہاتھ میں رہنے کی خواہش رکھتا تھا۔ رمضان کا سر یوں جھک گیا جیسے صدیوں کی بھاری قسطوں نے اپنا سارا بوجھ اس کی گردن پر ڈال دیا ہو۔
رمضان نے اشک بھری نظروں سے عدو کو دیکھا۔ عدو نے اپنی تھوتھنی رمضان کے کندھے پر رکھ دی اور پھر دھیرے دھیرے اسے سہلانے لگی جیسے کہہ رہی ہو،
“ایک چوتھائی روپیہ بھی رمضان میاں میں کچھ ہوتا ہے؟ تم ڈر کیوں رہی ہو؟” اور رمضان نے سر اٹھا کر عدو کی آنکھوں میں اپنے جذبات پڑھے۔ ’’ٹھیک ہے، یہ ڈیڑھ روپیہ اب تم پر ہے، عدو کے بیٹے!‘‘ اگلے دن رمضان شام کو اصطبل پہنچا تو اس کی جیب میں صرف ایک روپیہ تھا۔ اس کی حالت کم و بیش اس ہارے ہوئے جواری جیسی تھی جس کی قسمت کو سانپ سونگھ گیا تھا۔
جب عدو کو ایک ٹھیلے سے کھول کر اس کی جگہ پر باندھ دیا گیا تو اس نے اس جگہ کی زمین کو اس طرح سونگھنا شروع کر دیا جیسے وہ مٹی کھانے کو تیار ہو۔ پیٹے ہوئے گدھے کی طرح اس کے جسم کی بندش درد کر رہی تھی۔ وہ چاہتا تھا کہ رمضان اس کے جسم کی مالش کرے اور اس کا تناؤ دور کرے۔ لیکن رمضان کی اپنی روایت آج بھی کم نہیں تھی۔ وہ آنسو بھری نظروں سے رمضان کو دیکھنے لگا، جیسے کہہ رہا ہو، “رمضان میاں، سائیں جی جلد آئیں گے۔”
رمضان نے فیصلہ کیا کہ سائی جی کو کچھ نہیں دینا۔ بہرحال ہچکچاہٹ نہ کریں۔ وہ چارپائی پر بیٹھ گیا اور مصلی نے ہکا تازہ چھوڑا تھا۔ عدو بہت اداس تھا، اس کی برباد، جنگلی آنتیں باہر آنا چاہتی تھیں۔ ابلک کا بیٹا انسان سے کئی گنا زیادہ بھوکا محسوس کرتا ہے۔
بیچارہ ایڈو۔ اس کی ناک پر پسینے کے قطرے تھے۔ دھیرے دھیرے اس نے اپنا پیٹ اندر ہی اندر دبانا شروع کر دیا۔ بھوک بڑھتی جا رہی تھی، بڑھتی جا رہی تھی اور اس کی آنت برما کو گھما کر آنت میں سوراخ کر رہی تھی۔
رمضان بھی اداس تھا۔ سائیں جی کو لاکھ بلاؤ، وہ ان سے بات نہیں کرے گا، آج شرارتیں کرنا ذرا مشکل ہے۔ سائیں جی کا ووٹ مارا گیا ہے۔ بہت زیادہ تکلیف دہ.
کوئی کسی کا پیسہ نہیں لیتا۔ کچھ بھی نہیں، اس نے اپنے دماغ میں جھانکا تو دیکھا کہ دھندلے پردے جنم لے رہے ہیں۔ آج سائیں جی نہیں جائیں گے۔ بس اس کی زبان میں تھوڑی سی دیر ہو گی اور یہ کوچ، پہلوانوں کا چیف کوچ اسے ٹھیک کر دے گا۔ آج وہ اپنی جوانی کا ثبوت اپنی ادو کے سامنے دے گا۔
اور سائی جی آگئے۔ اس نے خاموش دیکھا۔ وہ رمضان کی چارپائی پر بیٹھ گیا۔ جانے کہاں دفن ہو گئے رمضان کے ذہن کے زہریلے نیلم؟ اس نے سوچا کہ کوئی نرم بات کہہ کر شرک کرے، لیکن اس کے ہونٹ نہیں ہلے، جیسے وہ گول کنڈلی کے ساتھ خاموش بیٹھا رہے گا۔
ہمیشہ ہمیشہ “اقساط کا مطلب یہ ہے کہ رمضان کا مطلب ہے۔” سائی جی نے کہا کہ پیسہ آسانی سے نکل جانا چاہیے۔ رمضان نے بے تکلفی سے سر ہلایا اور کہا ہاں سائجی۔ “یعنی ایک قسط میں تھوڑی سی رقم بھی دوسری قسط میں شامل نہیں ہونی چاہیے۔ اور واضح بات یہ ہے کہ اس میں زیادہ سے زیادہ فائدہ صرف مکروج کو ہوتا ہے۔
“ہاں سائیجی!” رمضان نے عدو کی طرف نظریں پھیرتے ہوئے جواب دیا اور عدو نے آہ بھری جیسے اسے اپنے آقا کے ساتھ کسی قسم کی ناانصافی پسند نہ ہو اور رشک ہو کہ رمضان نے شرافت کا پلّو اتنا مضبوطی سے کیوں پکڑ رکھا ہے؟ دتا اس ستائے ہوئے سائی جی کو کیوں نہیں بتاتا؟ “آپ کی ایمانداری، آپ کی سخاوت اور سب سے بڑھ کر آپ کی مہربانی۔” سائی نے چال بدلتے ہوئے کہا۔
کیا مجھے ان کے بارے میں کبھی کوئی شک نہیں ہوا؟” “آپ باس بن گئے۔” رمضان نے آہستہ سے کہا۔ ’’لیکن قسط کی ادائیگی وقت پر ضروری ہے، رمضان میاں!‘‘ سائیں جی نے رمضان کے کندھوں پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔ “اور میں یہ اپنی ضرورت سے تھوڑا سا کہتا ہوں۔ جلد ہی اس بوجھ سے چھٹکارا پانے کا یہی واحد طریقہ ہو سکتا ہے۔”
’’آج تک کسی نے مجھ پر الزام نہیں لگایا، سائی جی!‘‘ ’’میری بھی یہی فکر ہے۔‘‘ سائی جی نے اس کی آنکھوں میں دیکھا اور کہا اور اپنی چارپائی سے اٹھ کھڑے ہوئے۔
رمضان نے جیب سے پیسے نکال کر سائی جی کے سامنے پھینک دیے۔ “اور چاوانی۔” سائجی نے پیسے اٹھاتے ہوئے کہا۔ رمضان نے عدو کی طرف دیکھا۔ وہ ناک ہلا رہا تھا، جیسے کہہ رہا ہو۔ آپ کو پیسے دو وہیں بیٹھے رمضان میاں، اب کل چوانی بھی سائیں جی کے ماتھے سے ماری جائے گی۔ اور رمضان نے کل کا وعدہ کیا ہے۔ سائی چلا گیا، رمضان کو لگا کہ ناامیدی نے اسے ہر طرف سے گھیر لیا ہے۔
ایک روپے کی ادائیگی سے صدیوں کی بے شمار قسطوں میں کتنا فرق پڑ سکتا ہے؟ وہ بہت اداس تھا، جیسے اس کا دل بجھ جائے گا… ایک مستحکم چراغ کی طرح چمک رہا تھا۔
عدو اپنی جگہ بھوکا تھا۔ رمضان اس کے سامنے شرمندہ نہیں ہونا چاہتا تھا۔ بغیر بستر بچھا کر چارپائی پر گر گیا۔ اس نے ادھر کا رخ بھی نہیں کیا۔ پیچھے ایک تختہ تھا۔ کوئی اور وقت ہوتا تو وہ عدو کی طرح خراٹے لینے لگتا۔ وہ تھک کر لیٹا تھا۔ وہ سونا چاہتا تھا۔ سخت پیٹ پر نیند آتی ہے۔
وہ آج کہاں ہے یہ غائب ہو چکا تھا۔ پھر مصلی آ گئے۔ کہیں سے وہ دو روٹیاں اور اچار کا ٹکڑا لایا تھا۔ “رمضان، اے میاں رمضان!” دل میں گدگدی محسوس کرتے ہوئے اس نے کہا دیکھو میں تمہارے لیے روٹیاں لایا ہوں۔ تو آخر تم بھوکے کیوں ہو؟ مجھے ایک سے زیادہ پیٹ کھانے کے بعد آپ کے قریب سونا چاہیے۔ نہ بابا مجھ سے ایسا نہیں ہوگا، آخر میں اس قطب اعظم کی قبر کا بندہ ہوں اور اللہ اور اس کے قطب سے ڈرتا ہوں۔
رمضان کا خیال فوراً من و سلویٰ کی طرف دوڑا۔ مصلی روٹیاں لے کر چلا گیا۔ رمضان نے سوچا، آخر میں نے بھیجا ہی نہیں اور مجھے کسی کا دروازہ کھٹکھٹانے کا موقع نہیں ملا۔ اس وقت رمضان کے کانوں میں عدو کے کراہنے کی آواز آئی۔ آج رمضان المبارک کی آخری چوانی میں عدو دریا پر کیسے گیا؟
یہ رمضان میں من و سلویٰ کا ٹکڑا منہ میں ڈالا جاتا تھا۔ لیکن عجلت میں اس نے لکمے کو اپنی ہتھیلی پر رکھ کر کنویں کے کنارے پر پھینک دیا اور کہا کہ میں اس وقت تک کھانا نہیں کھاؤں گا جب تک تم کو اناج نہیں مل جاتا، تمہارے لیے دل او سلوا ہے، ایدو بیٹا!
اور رمضان نے کاغذ لپیٹ کر ایک طرف رکھ دیا اور اپنی پلکوں کے دروازے زبردستی بند کر لیے۔

Related Articles

Stay Connected

2,000FansLike
2,000FollowersFollow
2,000SubscribersSubscribe
گوشۂ خاصspot_img

Latest Articles

Ads Blocker Image Powered by Code Help Pro

Ads Blocker Detected!!!

We have detected that you are using extensions to block ads. Please support us by disabling these ads blocker.

Powered By
100% Free SEO Tools - Tool Kits PRO