33 C
Lahore
Tuesday, June 18, 2024

Book Store

سیل فون و انٹرنیٹ

سیل فون و انٹرنیٹ!
بھارت میں ذہنی و جسمانی امراض

اور فکری بے راہ روی کا طوفان

دیتے ہیں سراغ فصل گل کا،
شاخوں پر جلے ہوئے بسیرے۔

فاروق طاہر۔حیدرآباد،انڈیا

اس مضمون میں موبائل فون کی تباہ کاریوں کا احاطہ کیا گیا ہے جسے پڑھ کر آپ کے رونگٹے کھڑے ہو جائیں گے۔ ہر صاحب اولاد اس تحریر کو ایک بار ضرور پڑھیں۔

مجھے یہ ٹیکنالوجیکل پروگریس (ٹیکنالوجی کی ترقی) نہیں بلکہ انٹیلیکچول ڈیلکوئنسی(فکری بے راہ روی) معلوم ہوتی ہے ۔رفتہ رفتہ سب ٹیکنالوجی کے غلام بنتے جارہے ہیں۔
پڑھا تھا کہ جمشید بادشاہ اپنے جام میں ساری دنیا کا نظارہ کرتا تھا۔ آج بچے بوڑھے سب اپنے موبائل اسکرینوں پر ہوش ربا نظاروں سے لطف اندوز ہو رہے ہیں۔
مفت موبائل ڈیٹا نہیں بلکہ ان کے ہاتھ کوئی کھلونا آ گیا ہے۔
بوریت دور کرنے کی چکر میں مخرب اخلاق ویب سائٹس پر حاضری لگانا اب بچے بوڑھے کسی کے لیے بھی باعث عار نہیں ہے۔
افراد خاندان سے سیدھے منہ بات نہ کرنے والے فرضی (آن لائن)دوستیاں اور رشتہ داریاں نبھاتے نہیں تھکتے۔
کسی بھی نامعلوم شخص سے اس کی حقیقت جانے بغیر رشتہ استوار کرلیتے ہیں۔
نتیجتاً رسوائی ،مایوسی،ذہنی و فکری الجھنوں ا ور پریشانیوں کے باندھ کھل جاتے ہیں۔ فرضی رشتوں کے فریب پر، پھر ایک بار کھوکھلی آن لائن دنیا کے آگے ٹسوے بہا کر ہمدردیاں بٹورنے کے جتن کرتے ہیں۔
طلبہ کو پڑھائی، مارکس اور غیر صحت مند مسابقت نے ڈپریشن کا شکار کر دیا ہے۔
نوعمری میں دباؤ ،اکیلے پن کے شکار بچے کسی دردمند کو نہ پا کر انٹرنیٹ و شوشل میڈیا کی خرابیوں سے لذت کام و دہن حاصل کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔
جذباتی ہیجان و خلجان میں مبتلا بچے جھوٹی تسلیوں اور مکار رشتوں کی بھینٹ چڑھ جاتے ہیں۔ ریا و نمود، اسٹیٹس ،گلیمر و سنسنی خیزیوں کی چکر میں اپنا مستقبل داؤ پر لگا بیٹھتے ہیں۔
انٹرنیٹ و آن لائن دنیا کے ہاتھوں بچوں میں فکری بے راہ روی خوب پروان چڑھ رہی ہے۔ مشتہ نمونہ از خروارے، گزشتہ دو مہینوں کے دوران طلبہ کی جانب سے انجام دیئے گئے کئی ایک پرتشدد واقعات میں سے چند واقعات پیش کر رہا ہوں۔
29ستمبر 2022 کو دہلی کے ایک اسکول میں دسویں جماعت کے پانچ طلبہ نے منصوبہ بنایا اور آن لائن چاقو خرید کر اپنے ایک ساتھی کا قتل کر دیا۔(ٹائمز آف انڈیا)
19 ستمبر 2022 کو دہلی کے سیلم پور علاقے میں پیش آئے ایک خوفناک واقع نے سب کے دل و دماغ کو ماؤف کر دیا۔ ایک دس سالہ لڑکے ساتھ دس سے بارہ سال کی عمر کے تین لڑکوں (جس میں مقتول کا رشتے کا بھائی بھی شامل تھا) نے جبراً بدفعلی کی۔
اس کے مقعد میں لوہے کی سلاخ گھسیڑ دی اور اینٹوں سے مار مار کر شدید زخمی کر دیا۔ بعد ازاں یہ معصوم دوران علاج دواخانے میں انتقال کر گیا (ہندوستان ٹائمز)۔
چند دنوں قبل الیکٹرانک اور سوشل میڈیا پر ریاست جھارکھنڈ کے ڈمکا علاقے کے ایک رہائشی اسکول کی ویڈیو بہت تیزی سے وائرل ہوئی۔
جس میں نویں(9)جماعت کے طلبہ نے اپنے ریاضی کے استاد اور کلرک کو مبینہ طور پر پریکٹیکل امتحان میں خراب نمبر دینے پر برہم ہوکر درخت سے باندھ کر پیٹا (انڈین ایکسپریس)۔
ہفتہ24ستمبر 2022 کے ایک اور واقعہ میں دسویں جماعت کے ایک طالب علم نے اپنے ساتھی طالب علم کے ساتھ جھگڑ نے پر استاد کی ڈانٹ سے ناراض ہو کر اُستاد پر فائر کر دیا۔
ملزم طالب علم استاد پر تین راؤنڈ فائرکرنے کے بعد بندوق لے کر فرار ہو گیا (این ڈی ٹی وی ڈاٹ کام) ۔
طلبہ کے کمرہ جماعت میں مہلک ہتھیار ساتھ لانے ،
اساتذہ کو جان سے مار دینے کی دھمکیوں کے واقعات میں آئے دن اضافے سے فکرمند ٹمل ناڈو ہائرسیکنڈری اسکول ہیڈماسٹرس اسوسی ایشن نے اساتذہ کے تحفظ کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لیے قانون سازی کا مطالبہ کرتے ہوئے دھرنا دیا(ٹائمز آف انڈیا)۔
یہ سب کیاہو رہا ہے؟
حالیہ چند سالوں سے تعلیمی نظام غیر محسوس طریقے سے تاجرانہ آن لائن ایجوکیشنل کمپنیوں کے زیر تسلط ہوتا چلا جا رہا ہے۔
کرونا وبائی دور میں مدارس خوفناک زہریلے پروپیگنڈے کی وجہ سے تقریباً دو سال تک بند رہے ۔جس سے بچے اپنے گھروں میں محصور ہو کر سماجی زندگی سے دُور ہو گئے۔
انسانی نفسیات میں یہ بات شامل ہے کہ کوئی شئے اگر مفت میں مل جائے تو پھر وہ ا س کا غلط استعمال ضرور کرتا ہے۔
معاشرے کے کئی مسائل مفت خوری کی نفسیات سے معرض وجود میں آئے ہیں۔
مفت میں زہر بھی مل جائے تو ہم پینے سے دریغ نہیں کرتے۔ استحصالی تاجرانہ نظام ( جس میں تعلیم بھی شامل ہے) مفت خوری کی نفسیات کو عیاری سے استعمال کرتے ہوئے دنیا کو اپنے شکنجے میں مسلسل کس رہا ہے۔
سال 2014 میں سستے موبائل ڈیٹا پلان کے آغاز کے بعد سیل فون ہر بچے کے ہاتھ میں آ گیا۔
تین سالہ بچے کو سیل فون چلاتا دیکھ کر معصوم والدین کی باچھیں کھل جاتی ہیں۔
’’واہ! ہمارا بچہ کتنا ٹیک سیوی ہے‘‘۔
کریلا ، نیم چڑھا کے مصداق وبائی دور نے انٹرنیٹ ،موبائل اور دیگر ذرائع ابلاغ تک رسائی میں جتنی بھی رکاوٹیں حائل تھیں، انھیں ایک جھٹکے میں دُور کر دیا۔
ابتداً آن لائن تعلیم والدین اور دیگر افراد کو بہت دلکش اور ترقی یافتہ معلوم ہو رہی تھی،
لیکن لاک ڈاؤن کے بعد والدین کو آن لائن تعلیم کے نام پر بچوں کے ہاتھوں میں دیئے گئے سیل فونز کی خباثتوں کا حقیقی ادراک ہوا۔
حالیہ واقعات کی روشنی میں انٹرنیٹ ڈیٹا سے لیس موبائل فونز معاشرے کے لیے ایک بڑے خطرے کا پیش خیمہ ثابت ہو رہے ہیں۔
اللہ کرے یہ اندیشے ،اندیشے رہیں لیکن حقیقت سے آنکھیں چرانا حماقت نہیں تو اور کیا ہے؟
دماغ کا اگلا حصہ پری فرنٹل کورٹیکس (Pre Frontal Cortex) جذباتی کنٹرول اور خود پر قابو پانے میں مددگار ہوتا ہے۔ پچیس سال سے پہلے اس کی مکمل نشوونما نہیں ہوتی۔
پچیس سال سے کم عمر کے افراد جذبات پر کنٹرول ،
خود پر ضبط ،
جذبہ احتساب،
صواب دید،
صلاح و مصلحت شناسی کے لیے جدوجہد کرتے نظر آتے ہیں۔
یہی وجہ ہے کہ شراب اور بالغ فلمیں وغیرہ بچوں کے لیے ممنوع ہیں۔
مسرت و لذت کا لطیف فرق حصول لذت کو ایک نشہ قرار دیتا ہے۔
حصول لذت میں مگن نوخیز نسل موبائل فونز و انٹر نیٹ کے منفی استعمال سے معاشرے کے اخلاقی اقدار کے بخیے ادھیڑ رہی ہے۔
سل فون ملیریا، ڈینگی کے مچھر سے بھی زیادہ زہریلا ہے۔
اس کے زہریلے اثرات کے نفسیاتی، معاشرتی و جسمانی عوارض اور جرائم کی تباہ کن داستانیں اب منظر عام پر آنے لگی ہیں۔
سیل فون کی عادت نے بچوں کو احساس ذمہ داری سے محروم کر دیا ہے۔
عریاں مواد ، فحش فلمیں (بلیوفلمس) پر تشدد ویڈیوز تضیع اوقات گیمز سے اخلاقی بحران پیدا ہو رہا ہے۔
واٹس ایپ، انسٹاگرام گروپ تشکیل دے کر بچے ایک دوسرے کی تضحیک و تذلیل اور بہتان طرازی جیسے برے کاموں میں وقت تباہ کر رہے ہیں۔
مار دھاڑ،
قتل،
خودکشی،
عصمت دری،
ہم جنس پرستی،
خاندان کو فراموش کرنا،
ماں بہن کے ساتھ جنسی تعلق،
شراب نوشی،
سگریٹ،
حقہ،
چرس و دیگر منشیات کا استعمال ۔
نیٹ بچوں کو یہی تو سکھا رہا ہے۔
لاکھوں بچے پہلے ہی ان برائیوں میں مبتلا ہو چکے۔
ماہرین نفسیات بھی ان کا علاج کرنے سے عاجز ہیں۔
والدین کو خوش فہمی ہے کہ ان کے بچے بہت معصوم ہیں۔
سیاسی جماعتوں کے پاس طلبہ کی فلاح و بہبود کوئی اہمیت نہیں رکھتی ۔
ان کی فلاح بہبود کے بعد کیا انھیں ووٹ مل سکتے ہیں؟
اسی فکر نے انھیں اس سے کوسوں دور رکھا ہے۔
بچوں کے موبائل فون استعمال کرنے سے سیل فون اور سافٹ ویئر کمپنیوں کی کروڑہا روپے کی تجارتیں چل رہی ہیں۔
سیل فونز ،ہارڈویئر ،ڈیٹا پلانز چھوڑکر صرف آن لائن گیمنگ کا کاروبار ہی ایک ارب ڈالر سے زیادہ ہے۔
اگر بچے موبائل فونز استعمال کرنا چھوڑ دیں تو یہ تمام کاروبار چوپٹ ہو کر رہ جائے گا۔
ہمیں اپنی نوخیز نسل کو تباہی سے بچانے کے لیے ان امور پر سنجیدگی سے غور کرنا ہو گا۔
عوامی تحریکات و مہمات چلانا ہوں گی ۔
نوجوان ملک کا مستقبل ہوتے ہیں۔ اگر یہ محفوظ رہیں گے تو ملک محفوظ رہے گا۔
ٓآپ کے ذہن میں اُبھرنے والے سوال کا مجھے بخوبی احساس ہے۔
آپ کہنا چاہتے ہیں کہ ہم بچوں کو سیل فون کیوں نہ دیں؟
کیا ہم بچوں کو ٹیکنالوجی سے دُور کر دیں؟
بچوں کو سیل فون نہ دینے کی احمقانہ بات آپ بھلا کیسے کر سکتے ہیں؟
میرے عزیز بھائی! میں نے بھلا کب کہا کہ آپ کے بچے ٹیکنالوجی سے دُور ہو کر پتھر کے دور میں چلے جائیں۔
چھری سے پھل ، سبز ترکاری کاٹنے کے علاوہ کسی کا گلا بھی کاٹا جا سکتا ہے۔
اسی لیے کہتا ہوں کہ صرف معلومات نہیں، بچوں کی تربیت پر بھی توجہ مرکوز کریں۔
علم و تربیت کے مجموعہ کا نام ہی تعلیم ہے۔
ٹیکنالوجی ہماری غلام ہے۔ ہم ٹیکنالوجی کے غلام کیسے بن سکتے ہیں؟
گھر اور اسکول میں ڈیسک ٹاپ پر چائلڈ سیفٹی لاک لگائیں۔ والدین اور اساتذہ اپنی نگرانی میں بچوں کو انٹرنیٹ سے مطلوبہ معلومات حاصل کرنے میں مدد کریں۔
ڈیسک ٹاپ کے بجائے اگر آپ انہیں سیل فون تھما دیں گے تو وہ اپنے بلانکٹ(کمبل)میں ،
حمام(باتھ روم) میں،
کسی اور مقام پر دروازے بند کرتے ہوئے فحش مواد (بلیو پکچر) دیکھیں گے۔
پُرتشدد ویڈیوز دیکھنے کے عادی ہو جائیں گے۔ گیمز بھی بچوں کو تشدد پر اُبھار رہی ہیں۔
لاکھوں بچے پہلے ہی اس دلدل میں دھنس چکے۔
اپنی اولاد کی حفاظت کیجیے۔ سیل فون کی لت لاکھوں بچوں کے دماغ کو نقصان سے دوچار کر رہی ہے۔
دماغ میں پائے جانے والے گرے مادے (Grey Matter) اور سفید مادے (White Matter) کے خراب ہونے کی وجہ سے بچے ADHD جیسے دماغی امراض کا شکار ہو رہے ہیں۔
لاکھوں بچے سیل فون کی نیلی روشنی(بلیولائٹ) کی وجہ سے مکمل یا جزوی طور پر اپنی بینائی سے محروم ہو رہے ہیں۔
سیل فون پر ویڈیو گیمز کھیلنے سے گیمر کے انگوٹھے،
ٹریگر انگلی،
کارپل ٹنل سنڈروم (Carpal Tunnel Syndrome)،
ٹینس ایلبو،
کندھے گرنے
اور سر گرنے ( سنڈروم) جیسے امراض میں کا شکار ہو سکتے ہیں۔
ایک یا دو نہیں پوری دنیا میں لاکھوں بچے اس تباہ کن راستے پر چل پڑے ہیں۔
موبائل فون بچوں کے ہاتھوں میں ایک ٹائم بم سے کم نہیں۔
یہ آج نہیں تو کل ،کل نہیں تو پرسوں ایک دن ضرور پھٹے گا۔تب کیا ہو گا؟
یہ سوال مجھے اور ہر وہ شخص جو بچوں کے مستقبل کے لیے فکر مند ہے، کو پریشان کر رہا ہے؟
حیدرآباد کے چندانگر علاقے کی نویں جماعت میں زیر تعلیم لڑکی نے اپنے ماں سے پیٹ میں درد کی شکایت کی تو اسے دوا خانے لے جایا گیا۔
ڈاکٹر نے جب بتایا کہ لڑکی حمل سے ہے تو والدین کے اوسان خطا ہو گئے۔
صدمے سے دوچار والدین کو آخر کار سمجھ میں آ یا کہ ان کا بیٹا جو انٹر سال دوم (بارہویں ) میں پڑھ رہاتھا، اپنی چھوٹی بہن (متاثرہ لڑکی) کے ساتھ ایک ہی کمرے میں سو رہا تھا۔
بڑے بھائی اور چھوٹی بہن کے درمیان جنسی تعلق قائم ہو گیا۔
کھوکھلی لذت کے حصول میں متعدد بےراہ رویوں کا شکار ہو کر بچے جنسی تعلقات قائم کرنے سے بھی عارض نہیں ہیں۔
انٹر نیٹ و شوشل میڈیا کی دنیا میں برائیوں کو فخریہ پیش کرنے کا رجحان بچوں میں کسی مہلک متعدی بیماری کی طرح تیزی سے پھیل رہا ہے۔
موبائل فون کس قدر مفید اور کس درجہ خطرناک ہے،
یہ جانے بغیر ہم اسے بڑے چاؤ و یقین سے اپنے بچوں کے ہاتھ میں تھما رہے کہ یہ ان کے کام آئے گا۔
ہم یہ کہتے نہیں تھکتے کہ ہمارے بچے بہت اچھے ہیں ۔ہم ان کی بہتر پرورش کر رہے ہیں۔
کیا حقیقت میں ایسا ہورہا ہے؟
کیا ہمارے بچوں میں اور ہمارے افراد خاندان میں اتنی مہارت اور خود ضبطی پائی جاتی ہے کہ
وہ آن لائن دنیا کی برائی اور فحاشی کے سونامی سے خود کو بچا سکیں؟
نیکی و بدی کا فرق سمجھتے ہوئے خو د کو بہتر بنانے والے نئے نظریات ،مفید و تعمیری علوم سیکھ سکیں۔
کیا آپ نے کبھی اس جانب توجہ دی کی اس وقت آپ کے بچوں کے موبائل میں کیا چل رہا ہے؟
اگر آپ کو اپنے بچوں پر اتنا اعتماد ہے توپھران کے موبائل فونز،
ان کے فیس بک اکاونٹ،
واٹس ایپ،
انسٹا گرام ،
اسکائپ ،
اسنیپ چیٹ ،
ای میل اکاونٹس وغیرہ ایکٹیویٹ کرتے ہوئے ایک ہفتے تک اپنے پاس رکھیں ۔
اللہ آپ کے یقین کو خراب نہ کرے۔ آپ کو خیر و شر کا علم ہو جائے گا۔
سروسے کے چونکا دینے والے اعداد و شمار کے ہر دن ملک میں مفت موبائل ڈیٹا پر فحش موادجنسی ویڈیوز دیکھنے والوں کی اوسط تعداد 68%ہے۔
جن میں 21 فیصد مرد جب کہ 47% خواتین اور بچے بھی شامل ہیں۔
ہر 22 منٹ میں ایک عورت کی عصمت لوٹی جاتی ہے۔
99.1%عصمت دری کے واقعات پردئہ اخفاء ہی میں رہتے ہیں(ون انڈیا ڈاٹ کام)۔
نیشنل کرائم ریکارڈ بیورو کے مطابق 2021 میں بھارت میں ریپ کے 31677 واقعات رپورٹ ہوئے ہیں(دی ہندو 31اگست 2022)۔
والدین کو ان حالات میں بہت محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔
ماں باپ اپنے بچوں کے سامنے محبت کے اظہار، اشارات ، ذومعنیٰ الفاظ کے استعمال ، کسی جنسی حرکت و فعل سے باز رہیں تاکہ اخلاقی و معاشرتی اقدار برقرار رہیں۔
بچے بڑے معصوم ،بے ضرر اور نرم خو ہوتے ہیں لیکن سیل فون بچوں کو چائلڈ مونسٹر بنا رہے ہیں۔ اپنے بچوں کو موبائل فون کی لت سے بچائیے۔
والدین ،اساتذہ ،اسکول انتظامیہ اور بچوں کی فلاح و بہبود اور تعلیمی کاز سے وابستہ افراد کی یہ اجتماعی ذمہ داری ہے۔ اگر ہم ایسا نہیں کریں گے تو پھر بچے جرائم کا ارتکاب کریں گے ۔
کوئی ماں، باپ، اُستاد اور کوئی بچہ محفوظ نہیں رہے گا۔ پھر تو تباہی یقینی ہے۔

Previous article
Next article

Related Articles

Stay Connected

2,000FansLike
2,000FollowersFollow
2,000SubscribersSubscribe
گوشۂ خاصspot_img

Latest Articles