23 C
Lahore
Saturday, April 13, 2024

Book Store

پچھتاوا

پچھتاوا

بغیر سوچے سمجھے جو بھی کرو گے توبہ کرو گے

(ہندی کہانی)

کسی شہر میں دیو شرما نام کا ایک برہمن رہتا تھا لیکن ایک کونے میں بل بنا کر ایک چوہامنگو رہتا تھا۔ جس دن دیوشرما کی پتنی نے اپنے بیٹے کو جنم دیا، اس دن منگو کےگھر بھی ایک بچہ پیدا ہوا۔
لیکن بچے کو جنم دینے کے بعد منگوزیادہ دیر تک زندہ نہ رہ سکا۔ وہ مر گیا. برہمنی کو اس نوزائیدہ بچے پر بہت ترس آیا۔ اپنے بیٹے کی طرح اس نے بھی منگو کے بیٹے منگوس کا خیال رکھنا شروع کر دیا۔
آہستہ آہستہ منگوس بڑا ہوتا گیا۔ اب وہ عموماً برہمن کے بیٹے کے ساتھ رہنے لگا۔ دونوں بہت دوست بن چکے تھے۔ لیکن اپنے بیٹے اور منگوس سے اتنی محبت رکھنے کے باوجود برہمن کو ہمیشہ اس پر شک رہتا تھا۔
ایک دن کی بات ہے کہ برہمنی نے برتن  لے کر اپنے بیٹے کو سونے کے لیے لٹایا اور شوہر سے کہا کہ میں جھیل پر پانی لینے جا رہی ہوں، تم میرے واپس آنے تک یہیں رہو اور بچے کی دیکھ بھال کرتے رہو۔
جب برہمنی چلی گئی، اسی وقت ایک میزبان آیا اور برہمن کو کھانے کی دعوت دی۔ اپنے بیٹے کی حفاظت کا بوجھ اس منگوس پر ڈال کر برہمن اپنے میزبان کے ساتھ چلا گیا۔ اتفاق کی بات ہے کہ اسی وقت کہیں سے ایک کالا ناگ وہاں آیا اور وہ بچے کے بستر کی طرف بڑھنے لگا۔
منگوس نے اسے دیکھا۔
اسے ڈر تھا کہ کہیں یہ سانپ اس کے دوست کو نہ کاٹ لے۔ اس لیے وہ اس کالے سانپ پر ٹوٹ پڑا۔ سانپ بہت چست تھا۔ اس نے منگوس کے جسم کو کاٹ کر اس میں زخم بنائے لیکن آخر کار منگوس نے اسے مار کر اس کے جسم کے ٹکڑے کر دیئے۔ سانپ کو مارنے کے بعد منگو س اسی طرف چلا گیا جہاں برہمنی پانی بھرنے گئی تھی۔
اس کا خیال تھا کہ وہ اس کی بہادری کی تعریف کرے گی لیکن ہوا اس کے برعکس۔ اس کے خون آلود جسم کو دیکھ کر برہمن کا دماغ اندیشوں سے بھر گیا کہ شاید اس نے میرے بیٹے کو کاٹ لیا ہے۔ یہ خیال آتے ہی اس نے غصے سے سر پر اٹھایا ہوا گھڑا منگوس پر دے مارا۔ چھوٹا منگوس پانی سے بھرے گھڑے کی چوٹ برداشت نہ کر سکا اور وہیں مر گیا۔۔

۞۞۞۞۞۞۞

Previous article
Next article

Related Articles

Stay Connected

2,000FansLike
2,000FollowersFollow
2,000SubscribersSubscribe
گوشۂ خاصspot_img

Latest Articles