33 C
Lahore
Saturday, May 18, 2024

Book Store

Dr. Tahir| Hematologist | ڈاکٹر طاہر شمسی

معروف ہیماٹولوجسٹ اور بون میرو ٹرانسپلانٹ کے علمبردار، ڈاکٹر طاہر شمسی، منگل کی صبح کراچی کے ایک اسپتال میں انتقال کر گئے۔ وہ #سابق #وزیراعظم میاں #نواز #شریف کے معالج تھے۔ اس خبر کی ان کے اہل خانہ نے تصدیق کی۔
انھیں گزشتہ ہفتے برین ہیمرج کے باعث ہسپتال میں داخل کرایا گیا تھا جہاں ان کا علاج جاری تھا لیکن جمعرات کو ان کی حالت مزید بگڑ گئی۔
انھیں اسپتال کے انتہائی نگہداشت یونٹ (آئی سی یو) میں منتقل کیا گیا جہاں انھوں نے زندگی کو الوداع کہہ دیا۔
پاکستان میں 1996 میں بون میرو ٹرانسپلانٹ متعارف کرانے کا سہرا ڈاکٹر شمسی کو جاتا ہے۔ انھوں نے 650 بون میرو ٹرانسپلانٹ کیے اوروہ 100 سے زیادہ تحقیقی مضامین کے مصنف تھے۔
کوویڈ 19 وبائی مرض کی پہلی لہر کے دوران، ڈاکٹر شمسی نے پلازما تھراپی کا خیال پیش کیا تھا۔
ڈاکٹر شمسی نے 2011 میں خون سے متعلق امراض کے علاج کے لیے نیشنل انسٹی ٹیوٹ فار بلڈ ڈیزیز قائم کیا تھا۔ وہ رائل کالج آف پیتھالوجسٹ فیلو تھے۔
ان کی خدمات کے اعتراف میں 2016 میں ڈاؤ گریجویٹس ایسوسی ایشن آف نارتھ امریکا کی جانب سے ممتاز ڈاکٹر کو لائف ٹائم اچیومنٹ ایوارڈ سے نوازا گیا۔
ان کی موت کی خبر سن کر ہر کوئی دنگ رہ گیا۔ وہ ایک ماہ سے ٹھیک محسوس نہیں کر رہے تھے۔ پیشے کے لحاظ سے ایک معروف ہیماٹولوجسٹ اور آنٹولوجسٹ کی حیثیت سے انھوں نے میڈیکل انڈسٹری میں بہت بڑا نام اور شہرت حاصل کی ہے۔ وہ پاکستان کی محبوب اور قائم و دائم شخصیت تھے۔ ان کے بہت سے مداح اور نیک تمنائیں انھیں روحانی خراج عقیدت پیش کر رہے ہیں ۔
ان کا خاندان اس وقت گہرے غم میں ہے۔
ڈاکٹر طاہر شمسی کی موت کی وجہ
ایک ہفتہ قبل انہیں اچانک برین ہیمرج ہونے پر انھیں آغا خان ہسپتال لے جایا گیا۔ جہاں وہ فالج کا شکار ہو گئے۔ ان کا علاج کرنے والے ڈاکٹر نے ان کا آپریشن کر کے ان کی حالت مستحکم کرنے کی پوری کوشش کی لیکن نتیجہ ان کے حق میں نہیں آیا۔ آپریشن کے بعد انھیں موت سےمحض کچھ گھنٹے قبل آئی سی یو میں منتقل کر دیا گیا تھا۔ وہ مسلسل اپنی زندگی کی جنگ لڑ رہا تھے۔اور بالآخر صبح 7 بج کر 20 منٹ پر زندگی کی جنگ ہار گئے۔
ڈاکٹر طاہر شمسی کون تھے؟
ڈاکٹر طاہر شمسی ایک نامور ڈاکٹر تھے جو 1967 میں کراچی، پاکستان میں پیدا ہوئے۔ 2021 تک، موت کے وقت ان کی عمر 54 سال تھی۔

 وہ ملک کے معروف ڈاکٹر تھے۔ وہ اپنی فیملی کے ساتھ کراچی میں مقیم تھے۔ تاہم ان کے اہل خانہ کے بارے میں زیادہ معلومات دستیاب نہیں۔ ڈاکٹر نے میڈیکل میں کئی ڈگریاں حاصل کیں جن میں MBBS، FRCP، MRCPath، اور FRCPath شامل ہیں۔ وہ 18 سال سے زیادہ کا تجربہ رکھنے والے ماہڑ معالج تھے۔
اس کے ساتھ وہ ایک معروف سائنسدان بھی تھے۔ انھیں 2019 میں پاکستان سرٹیفکیٹ آف تعریفی ایوارڈ سے نوازا گیا تھا۔ 2011 میں، انھوں نے قومی ادارہ برائے خون سے متعلق امراض کی بنیاد رکھی جہاں خون کی بیماری کا علاج کیا جاتا ہے۔
انھوں نے NIBD اسٹیم سیل پروگرام میں بطور ڈائریکٹر بھی خدمات انجام دیں۔ وہ رائل کالج آف پیتھالوجسٹ سے فیلوشپ حاصل کرنے کے لیے بھی جانے جاتے تھے۔ انھوں نے پاکستان میں بون میرو ٹرانسپلانٹ متعارف کرانے پر پہچان حاصل کی۔

Related Articles

Stay Connected

2,000FansLike
2,000FollowersFollow
2,000SubscribersSubscribe
گوشۂ خاصspot_img

Latest Articles