23 C
Lahore
Saturday, April 13, 2024

Book Store

بادشاہ اور فقیر

بادشاہ اور فقیر

(ہندی کہانی)

الگ الگ بابا رب کی عقیدت کی تنہائی میں مگن ہیں۔ ایک بار سنت شاعر کمبھنڈاس کو ایک شہنشاہ نے اپنے محل میں آنے کے لیے بلایا۔
ولی نے کاغذ پر لکھا اور دیا
سنتن کہا سیکری سو کام، آوت جات پنہیا ٹوٹے بسر جائے ہرنام۔
یعنی مجھے بادشاہ اور اس کے محل سے کیا لینا دینا۔ جنگل کی تنہائی چھوڑ کر وہاں جانے سے میرے پاؤں کے جوتے ختم ہو جائیں گے اور میں ایسے وقت میں ہری نام سے محروم رہ جاؤں گا۔
جب شہنشاہ نے یہ سطر پڑھی تو وہاں سے اس ولی کو سلام کیا۔
بعض اولیاء بعض اوقات امیروں اور بادشاہوں کی مہمان نوازی اس مقصد سے قبول کرتے ہیں کہ انہیں نیک کاموں میں شامل کیا جائے۔
جلال الدین اعلیٰ فقیر مانے جاتے تھے۔ وہ درشن کے لیے آنے والوں کو نیکی کی زندگی گزارنے اور خدمت و خیرات میں مشغول رہنے کی ترغیب دیتے تھے۔
ایک دفعہ اسے معلوم ہوا کہ ریاست کا بادشاہ مطلق العنان ہو گیا ہے۔ ولی شہنشاہ کے محل میں گیا اور اسے اپنی پرتعیش زندگی ترک کرنے اور غریبوں کی مدد کرنے جیسی بہت سی نصیحتیں کیں۔
جب ان کے شاگردوں کو اس کا علم ہوا تو وہ غمگین ہوئے، کیونکہ قرآن میں لکھا ہے کہ سچے فقیر کو محل میں نہیں جانا چاہیے۔ ایک شاگرد نے کہا
بابا آپ وہاں کیوں گئے؟
بابا جلال الدین مسکرائے اور بولے شہنشاہ جاہل ہے۔ اس کے پاس میرے قریب آنے کا وقت نہیں ہے۔ میں اس سے کچھ لینے نہیں گیا تھا۔
صوفیاء کا بھی فرض ہے کہ وہ چھوٹے ہوں یا بڑے مشورے دے کر سب کو نیک بنادیں۔
شاگرد صاحب کے استدلال سے مطمئن ہو کر اس کے سامنے جھک گیا۔

۞۞۞۞۞۞۞

 

Related Articles

Stay Connected

2,000FansLike
2,000FollowersFollow
2,000SubscribersSubscribe
گوشۂ خاصspot_img

Latest Articles